Return to Video

محفوظ سیکسٹنگ [جنسی گفتگو] کیسے کریں

  • 0:01 - 0:05
    لوگ بہت عرصے سے مختلف ذرائع سے
    جنسیات پر بات کر رہے ہیں۔
  • 0:06 - 0:09
    عاشقانہ خطوط، فون سیکس، اور
    جذبات کو بھڑکانے والی تصویریں۔
  • 0:09 - 0:16
    یہاں تک کہ1886کی اس لڑکی کی کہانی
    جو ایک مرد سے ٹیلیگراف کے ذریعے ملی
  • 0:16 - 0:17
    اور اس کے ساتھ بھاگ گئی۔
  • 0:19 - 0:24
    آج ہمارے پاس سیکسٹنگ ہے،
    اور میں ایک ماہر سیکسٹر۔
  • 0:24 - 0:26
    ایک ماہر سیکسٹنگ کرنے والی نہیں۔
  • 0:27 - 0:31
    تاہم، مجھے پتا ہے یہ کیا ہے ۔۔
    شائد آپ کو بھی۔
  • 0:31 - 0:32
    [یہ ایک عضو تناسل ہے]
  • 0:32 - 0:35
    (قہقہہ)
  • 0:36 - 0:43
    سیکسٹنگ پرمیری تحقیق سال 2008 سے ہے
    جب سے میڈیا نے اس جانب توجہ کی ہے۔
  • 0:43 - 0:46
    میں نے سیکسٹنگ کی اخلاقی
    بے قاعدگیوں پر ایک کتاب لکھی تھی۔
  • 0:46 - 0:47
    اور جو مجھے پتہ چلا وہ
    کچھ یوں ہے:
  • 0:47 - 0:51
    اکثر لوگوں کی فکر کی وجہ
    غلط ہے۔
  • 0:51 - 0:55
    وہ بس سیکسٹنگ کو جڑ سے
    ختم کرنے کے لئے کوشاں ہیں۔
  • 0:55 - 0:56
    مگر میں یہاں یہ پوچھنا چاہوں گی:
  • 0:56 - 1:01
    اگر یہ مکمل باہمی رضامندی سے ہے
    توپھر سیکسٹنگ میں کیا برائی ہے؟
  • 1:01 - 1:05
    لوگ بہت سے ایسے کام کرتے ہیں
    جو شائد آپ نہ کرتے ہوں،
  • 1:05 - 1:08
    جیسے کے نیلی پنیر اور
    دھنیا وغیرہ کا استعمال۔
  • 1:08 - 1:09
    (قہقہہ)
  • 1:11 - 1:15
    سیکسٹنگ یقیناً پرخطر ہے،
    ہر تفریح کی طرح،
  • 1:15 - 1:21
    مگر جب تک آپ کسی کو تصویر
    نہ بھیجیں جو وہ وصول نہ کرنا چاہتا ہو،
  • 1:21 - 1:23
    تب تک کوئی خطرہ نہیں۔
  • 1:23 - 1:26
    میری نظر میں یہ ایک گھمبیر مسئلہ ہے کہ جب
  • 1:26 - 1:29
    لوگ دوسروں کی ذاتی تصاویر
    کا تبادلہ کرنے لگیں
  • 1:29 - 1:31
    وہ بھِی ان کی اجازت کے بغیر۔
  • 1:31 - 1:34
    تو بجائے سیکسٹنگ کے لئے پریشان ہوا جائے
  • 1:34 - 1:38
    میرے خیال میں ہمیں ڈیجیٹل رازداری پر
    زیادہ سوچنا اور فکر کرنی چاہئے۔
  • 1:39 - 1:41
    بنیادی چیز ہے رضامندی۔
  • 1:42 - 1:45
    اس وقت بھی بہت سے لوگ سیکسٹنگ
    کے بارے میں سوچ رہے ہیں
  • 1:45 - 1:48
    بغیر کسی رضامندی کے تصور کے۔
  • 1:48 - 1:52
    کیا آپ جانتے ہیں کہ ہم بچوں کا
    سیکسٹنگ کرنا جرم قرار دیتے ہیں؟
  • 1:53 - 1:57
    یہ ایک جرم ہوسکتا ہے کیوں کہ
    یہ بچوں میں جنسیت و برہنگی کی وجہ ہے۔
  • 1:57 - 2:00
    اگر کسی 18 سال سے کم عمر
    کی تصویر ہو،
  • 2:00 - 2:01
    اور اس سے فرق نہیں پڑتا
  • 2:01 - 2:05
    کہ وہ تصویر انھوں نے خود لے کر
    جان بوجھ کر تقسیم کی ہو۔
  • 2:06 - 2:09
    تو بالآخر ہم اس عجیب قانونی
    پیچیدگی میں پہنچ جاتے ہیں
  • 2:09 - 2:13
    جس کے تحت امریکہ کی اکثر ریاستوں میں
    دو سترہ سال کے افراد سیکس کرسکتے ہیں
  • 2:13 - 2:15
    مگر وہ اس کی تصویر کشی نہیں کرسکتے۔
  • 2:17 - 2:21
    کچھ ریاستوں نے سیکسٹنگ کو
    چھوٹے درجے کا جرم قرار دینے کی کوشش کی ہے
  • 2:21 - 2:24
    مگر ان قوانین سے پھر وہی مسائل
    جنم لیتے ہیں
  • 2:24 - 2:28
    کیونک یہ اب بھی مرضی سے کی گئی
    سیکسٹنگ کو غیر قانونی کہتے ہیں۔
  • 2:29 - 2:30
    یہ کوئی قابل فہم بات نہیں
  • 2:30 - 2:35
    کہ ہر سیکسٹنگ کو بند کیا جائے
    رازداری کی خلاف ورزی سے بچنے کے لئے۔
  • 2:35 - 2:36
    یہ تو ایسا ہے جیسے کہا جائے
  • 2:36 - 2:42
    اکیلی ملاقاتوں میں ہونے والے زنا سے
    بچنے کے لئے ملاقاتوں کو ہی بند کردیا جائے۔
  • 2:43 - 2:48
    اکثر نوجوان سیکسٹنگ پر گرفتار نہیں ہوتے،
    مگر کیا آپ اندازہ لگا سکتے ہیں کہ کون؟
  • 2:49 - 2:53
    اکثر وہ نوجوان جو اپنے ساتھی کے
    والدین کو ناپسند ہوں۔
  • 2:54 - 2:58
    اور اس کی وجہ معاشرتی درجہ بندی،
    تعصب یا ہم جنسیت ہوسکتی ہے۔
  • 2:59 - 3:02
    زیادہ تر وکیل اتنے ہوشیار ہوتے ہیں کہ
  • 3:02 - 3:07
    نوجوانوں پر بچوں میں فحاشی والے
    الزامات نہ لگائیں، مگر کچھ لگاتے بھی ہیں۔
  • 3:08 - 3:11
    نیو ہمپشائر یونیورسٹی کے محققین کے مطابق
  • 3:11 - 3:17
    بچوں سے فحاشی کے الزام میں گرفتار
    ہونے والوں میں 7 فیصد نوجوان ہوتے ہیں۔
  • 3:17 - 3:20
    پوری رضامندی سے سیکسٹنگ
    دوسرے نوجوانوں کے ساتھ۔
  • 3:21 - 3:24
    بچوں سے متعلق برہنگی ایک
    بڑا جرم ہے،
  • 3:24 - 3:28
    مگر یہ اور نوجوانوں میں سیکسٹنگ
    ایک چیز نہیں۔
  • 3:29 - 3:32
    والدین اور اساتذہ بھی سیکسٹنگ
    پر بات کررہے ہیں
  • 3:32 - 3:36
    حقیقتاً رضامندی والی بات پرسوچے بغیر۔
  • 3:36 - 3:40
    نوجوانوں کو ان کا پیغام اکثر یہ ہوتا ہے:
    کہ بس مت کرو یہ
  • 3:40 - 3:44
    اور میں سمجھتی ہوں۔۔
    اس میں قانونی رسک ہیں
  • 3:44 - 3:47
    جس میں، رازداری کی خلاف ورزی
    بھِی شامل ہے۔
  • 3:47 - 3:49
    اور جب آپ ایک نوجوان تھے،
  • 3:49 - 3:52
    مجھے یقین ہے کہ جیسا کہا گیا ہوگا
    ویسا ہی کیا ہوگا، ہیں نا؟
  • 3:53 - 3:57
    ہوسکتا ہے آپ سوچ رہے ہوں، میرا بچہ
    سیکس ٹیکسٹ نہیں کرے گا۔
  • 3:57 - 4:00
    اور صحیح بھی ہے، ممکن ہے آپ کا
    ننھا فرشتہ ایسا نہ کررہا ہو
  • 4:00 - 4:04
    کیوں کہ 16 اور 17 سال کی عمر کے
    محض 33 فیصد
  • 4:04 - 4:06
    نوجوان سیکسٹنگ کرتے ہیں۔
  • 4:07 - 4:12
    مگر معذرت کے ساتھ جب وہ بڑے ہوں گے
    امکان یہی ہے کہ سیکسٹنگ کریں گے۔
  • 4:12 - 4:18
    میری نظر سے گزرے تمام تجزیوں کے مطابق
    50 فیصد تعداد 18-24 سال والوں کی ہے۔
  • 4:19 - 4:22
    اور اکثر، کچھ غلط نہیں ہوتا۔
  • 4:22 - 4:27
    لوگ ہر وقت مجھ سے پوچھتے ہیں، کیا
    سیکسٹنگ بہت خطرناک نہیں ہے؟
  • 4:27 - 4:31
    یہ ایسی ہے جیسے آپ اپنا پرس کبھی
    پارک کی کرسی پر نہیں چھوڑتے
  • 4:31 - 4:34
    کیونکہ آپ کو خدشہ ہے کے وہ چوری
    ہوجائے گا۔ ٹھیک ہے نا؟
  • 4:35 - 4:36
    اب سنئے میں کیا سوچتی ہوں:
  • 4:36 - 4:40
    سیکسٹنگ ایسی ہے جیسے آپ اپنا پرس
    اپنے بوائے فرینڈ کے گھر چھوڑ آئیں۔
  • 4:40 - 4:42
    اگرآپ اگلے دن واپس آئیں
  • 4:42 - 4:44
    اور سارے پیسے غائب ہوں،
  • 4:45 - 4:47
    تو آپ کو اسی انسان کو الزام دینا ہوگا۔
  • 4:48 - 4:50
    (قہقہہ)
  • 4:51 - 4:54
    تو بجائے سیکسٹنگ کو جرم بنائیں
  • 4:54 - 4:56
    تاکہ رازداری کی حفاظت کی کوشش ہوسکے،
  • 4:56 - 5:00
    بجائے رضامندی کے قوانین کو وضع کرنے کے
  • 5:00 - 5:04
    کہ ہم اپنے ذاتی مواد و معلومات کی تشہیر
    کہ بارے میں کیسے سوچیں۔
  • 5:04 - 5:09
    میڈیا سے جڑی ہر نئی ایجاد رازداری
    کے مسائل پیدا کررہی ہے۔
  • 5:09 - 5:13
    درحقیقت، امریکہ میں رازداری سے متعلق
    ہونے والے اولین مباحث
  • 5:13 - 5:18
    ایسی ہی نئی آنے والی ٹیکنالوجی اور
    ایجادات کے جواب میں تھے۔
  • 5:18 - 5:22
    اٹھارویں صدی کے اواخر میں،
    لوگ کیمروں کی طرف سے فکرمند تھے
  • 5:22 - 5:25
    جو اچانک ہی بہت آسانی سے لے کر
    گھومے جانے کے قابل ہوگئے تھے،
  • 5:25 - 5:28
    اور اخبارات کے [راز کھولتے] مضامین۔
  • 5:28 - 5:32
    وہ فکرمند تھے کے کیمرا ان سے جڑی
    معلومات حاصل کرلے گا،
  • 5:32 - 5:35
    اسے بے جا استعمال کر کے ہر
    طرف پھیلا دے گا۔
  • 5:35 - 5:37
    یہ بات سنی سنی سی لگتی ہے نا؟
  • 5:37 - 5:42
    سوشل میڈیا اور ڈرون کیمروں سے جڑی یہ وہی
    فکر ہے جس نے ہمیں پریشان کررکھا ہے،
  • 5:42 - 5:43
    اور یقیناً سیکسٹنگ نے بھی۔
  • 5:44 - 5:46
    اور ٹیکنالوجی کے یہی خوف،
  • 5:46 - 5:47
    سمجھ میں آنے والے ہیں
  • 5:47 - 5:51
    کیوںکہ ٹیکنالوجی بڑھا چڑھا کر
    ہرطرف پھیلا سکتی ہے
  • 5:51 - 5:54
    ہمارے عیب اور بری عادتیں۔
  • 5:54 - 5:57
    مگر اس کے حل بھی ہیں۔
  • 5:57 - 6:00
    ہم پہلے بھی اس مقام پر تھے، ایک نئی
    خطرناک ایجاد کے ساتھ۔
  • 6:01 - 6:04
    1908 میں، فورڈ نے ماڈل ٹی کار متعارف کی۔
  • 6:05 - 6:07
    ٹریفک حادثات سے جڑی اموات
    بڑھ رہی تھیں۔
  • 6:07 - 6:10
    یہ بہت سنجیدہ مسئلہ تھا ۔۔
    مگر اب محفوظ دکھتا ہے، ہے نا؟
  • 6:12 - 6:16
    ہمارا پہلاقدم یہ تھا کہ ڈرائیور کے
    روئیوں میں تبدلی لائی جائے،
  • 6:16 - 6:20
    تو ہم نے حد رفتار متعین کیں اور
    جرمانوں کے ساتھ ان کا اطلاق کیا۔
  • 6:20 - 6:22
    مگر اس کے بعد کی دہائیوں میں،
  • 6:22 - 6:28
    ہم نے محسوس کیا کہ کار کی ٹیکنالوجی
    ازخود اعتدال میں نہیں ہے۔
  • 6:28 - 6:31
    ہم کار کو مزید محفوظ بنا سکتے ہیں۔
  • 6:31 - 6:34
    تو 1920 میں، محفوظ بکھر جانے والے
    شیشوں کا حصول ممکن ہوا۔
  • 6:34 - 6:37
    پھر 1950 میں، سیٹ بیلٹ۔
  • 6:37 - 6:40
    اور 1990 میں، ہوا بھرے تھیلے۔
  • 6:40 - 6:43
    ان تینوں معاملات میں:
  • 6:43 - 6:48
    قانون، عام افراد اور انڈسٹری،
    سب ایک ساتھ مل گئے
  • 6:48 - 6:51
    تاکہ مسئلے کے حل میں مدد کریں،
    جو ایک نئی ایجاد کی وجہ سے آیا ہے۔
  • 6:51 - 6:55
    اسی انداز سے ہم ڈیجیٹل رازداری کے
    معاملے کو لے سکتے ہیں۔
  • 6:55 - 6:58
    یقیناً، یہ واپس رضامندی پر آجاتا ہے۔
  • 6:58 - 7:00
    تو آئیڈیا یہ ہے کہ:
  • 7:00 - 7:03
    اس سے پہلے کہ کوئی آپ کی خفیہ
    معلومات پھیلا سکے،
  • 7:03 - 7:06
    انھیں آپ کی اجازت درکار ہو۔
  • 7:06 - 7:11
    مثبت رضامندی کا یہ خیال بالجبر زنا
    کے خلاف کام کرنے والوں سے آیا ہے
  • 7:11 - 7:15
    جو کہتے ہیں کہ ہر جنسی تعلق سے پہلے
    باہمی رضامندی ضروری ہے۔
  • 7:15 - 7:19
    اور بہت سے دوسرے معاملات میں
    رضامندی پر ہمارے معیار بہت بلند ہیں۔
  • 7:19 - 7:21
    سرجری کروانے کے بارے میں سوچئے۔
  • 7:21 - 7:23
    آپ کے ڈاکٹر کو یقین کرنا پڑتا ہے
  • 7:23 - 7:27
    کہ آپ اپنی رضا و رغبت سے سرجری
    کے لئے مکمل آمادہ ہیں۔
  • 7:28 - 7:31
    یہ آئی ٹیون کے استعمال کے لئے ہونے
    والے معاہدے جیسا نہیں
  • 7:31 - 7:35
    جسے بس اوپر سے نیچے گھسیٹا اور
    راضی راضی راضی پر کلک کردیا۔
  • 7:35 - 7:37
    (قہقہہ)
  • 7:37 - 7:42
    اگر ہم رضامندی پر مزید سوچیں تو
    ہم رازداری کے بہتر قانون وضع کرسکتے ہیں۔
  • 7:42 - 7:46
    فی الوقت، ہمیں وہ سارا تحفظ حاصل نہیں۔
  • 7:46 - 7:49
    اگر آپ کا سابقہ شریک حیات ایک
    خوفناک انسان ہے،
  • 7:49 - 7:54
    تو وہ آپ کی برہنہ تصاویر کسی
    فحش ویب سائٹ پر ڈال سکتا ہے۔
  • 7:54 - 7:57
    پھر ان تصاویر کو وہاں سے ہٹانا
    بہت ہی مشکل کام ہے۔
  • 7:57 - 7:58
    اور بہت سی ریاستوں میں،
  • 7:58 - 8:02
    اچھا یہی ہے کہ اپنی تصاویر خود ہی بنالیں
  • 8:02 - 8:05
    اس سے آپ کم از کم کاپی رائٹ
    کا ہرجانہ دائر کرسکیں گے۔
  • 8:05 - 8:07
    (قہقہہ)
  • 8:07 - 8:10
    اس وقت، اگر کوئی آپ کی رازداری
    کی خلاف ورزی کرے،
  • 8:10 - 8:15
    چاہے وہ کوئی فرد ہو یا کمپنی یا
    قومی سلامتی کا ادارہ،
  • 8:15 - 8:18
    آپ اس پر کیس کرنے کی کوشش
    کرسکتے ہیں،
  • 8:18 - 8:20
    ہوسکتا ہے آپ کامیاب نہ بھی ہوں
  • 8:20 - 8:25
    کیوں کہ اکثر عدالتیں ڈیجیٹل رازداری
    کو ناممکن سمجھتی ہیں۔
  • 8:25 - 8:28
    تو وہ کسی کو اس کی خلاف ورزی کی
    سزا بھی نہیں دینا چاہتیں۔
  • 8:29 - 8:32
    اب بھی بسا اوقات لوگ مجھ
    سے سوال کرتے ہیں،
  • 8:32 - 8:37
    کیا یہ ڈیجیٹل تصاویر عوامی اور
    ذاتی نوعیت کا فرق ختم نہیں کررہیں
  • 8:37 - 8:39
    کیوں کو وہ ڈیجیٹل ہیں، اس لئے؟
  • 8:40 - 8:41
    نہیں، نہیں
  • 8:41 - 8:44
    ہر وہ چیز جو ڈیجیٹل ہوخود بخود
    عوامی نہیں بن جاتی.
  • 8:44 - 8:46
    یہ بات عقل میں آنے والی نہیں۔
  • 8:46 - 8:50
    نیویارک یونیورسٹی کی قانونی اسکالر
    ہیلن نسین بام ہمیں بتاتی ہیں،
  • 8:50 - 8:52
    ہمارے پاس قانون، اصول اور طریقہ کار ہیں
  • 8:52 - 8:56
    جو ہر قسم کی ذاتی معلومات
    کو تحفظ دیتے ہیں ،
  • 8:56 - 8:59
    اور اس میں کوئی فرق نہیں کہ وہ
    ڈیجیٹل ہو یا نہ ہو۔
  • 8:59 - 9:02
    صحت سے متعلق آپ کی تمام
    معلومات ڈیجیٹل ہوتی ہیں
  • 9:02 - 9:05
    پر آپ کا ڈاکٹر اسے کسی سے
    بانٹ نہیں سکتا۔
  • 9:05 - 9:09
    آپ کی ساری مالی معلومات ڈیجیٹل
    ڈیٹابیس میں ہوتی ہے،
  • 9:09 - 9:14
    پرآپ کی کریڈٹ کارڈ کمپنی آپ کی خریداری
    کی فہرست شائع نہیں کرسکتی۔
  • 9:15 - 9:21
    بہتر قوانین، رازداری کی خلاف ورزی کے
    مسائل کو بہتر سنبھال سکتے ہیں،
  • 9:21 - 9:25
    مگر آسان ترین چیز جو ہم کرسکتے ہیں
    وہ خود میں تبدیلی ہے
  • 9:25 - 9:28
    تاکہ ایک دوسرے کی رازداری رکھنے
    میں مدد کرسکیں۔
  • 9:28 - 9:30
    ہمیں ہمیشہ یہی بتایا گیا کہ، رازداری
  • 9:30 - 9:33
    مکمل طور پر ہماری ذاتی ذمہ داری ہے۔
  • 9:33 - 9:38
    ہمیں اپنی رازداری پر مستقل نگاہ رکھتے
    ہوئےاسے محفوظ کرتے رہنا چاہئے۔
  • 9:38 - 9:42
    جو چیز ہم نہیں چاہتے کہ دنیا دیکھے
    اسے کسی سے نہ بانٹیں۔
  • 9:43 - 9:45
    یہ عقل تسلیم نہیں کرتی۔
  • 9:45 - 9:48
    ڈیجیٹل میڈیا سماجی ماحول ہیں
  • 9:48 - 9:52
    اور ہم اپنی چیزیں سارے دن بلکہ ہر دن
    ان سے بانٹتے ہیں جن پر ہمیں اعتبار ہے۔
  • 9:53 - 9:56
    پرنسٹن کی محقق جینیٹ ورٹیسی
    دلیل دیتی ہیں،
  • 9:56 - 10:00
    ہماری معلومات اور ہماری رازداری
    صرف ذاتی نہیں ہیں،
  • 10:00 - 10:02
    یہ دراصل باہمی ہیں۔
  • 10:02 - 10:06
    اور جو ایک چیز آپ بڑی آسانی
    سے کرسکتے ہیں وہ یہ
  • 10:06 - 10:11
    کہ بس جب کسی سے متعلق کچھ بانٹنا ہو
    تو اس کی اجازت لینا شروع کردیں۔
  • 10:11 - 10:15
    اگر آپ کسی کی تصویر آن لائن
    بھیجنا چاہیں، اجازت لے لیں۔
  • 10:15 - 10:18
    اگر کوئی ای میل آگے بھیجنا چاہتے ہوں،
  • 10:18 - 10:19
    اجازت لے لیجئیے۔
  • 10:19 - 10:22
    اور اگر آپ کسی کی برہنہ سیلفی
    بانٹنا چاہیں،
  • 10:22 - 10:24
    یقیناً، اجازت لے لیں۔
  • 10:26 - 10:30
    یہ انفرادی تبدیلیاں یقیناً مددگار ہوں گی
    ایک دوسرے کی رازداری کی حفاظت میں،
  • 10:30 - 10:34
    مگر ضرورت ہے کہ ٹیکنالوجی کمپنیاں
    بھی آگے بڑھیں۔
  • 10:34 - 10:39
    رازداری کی حفاظت میں ان کمپنیوں کا
    بہت ہی تھوڑا فائدہ ہے
  • 10:39 - 10:42
    کیوںکہ ان کے کاروبار کا انداز
    ہمارے بانٹتے رہنے پرمنحصر ہے
  • 10:42 - 10:44
    جتنے زیادہ لوگوں کے ساتھ بھِی ممکن ہو۔
  • 10:45 - 10:47
    اس وقت، اگر میں آپ کو ایک تصویر بھیجوں،
  • 10:47 - 10:50
    آپ جسے چاہیں وہ تصویر بھیج سکتے ہیں۔
  • 10:50 - 10:54
    مگر کیا ہو اگر مجھے فیصلہ کرنا ہو
    کہ یہ آگے بھیجے جانے کے قابل ہے یا نہیں؟
  • 10:54 - 10:58
    یہ آپ کو بتائے گا کہ اسے آگے بڑھانے
    کے لئے میری اجازت نہیں ہے۔
  • 10:59 - 11:03
    ہم اکثر ایسی چیزیں کرتے ہیں
    کاپی رائٹ کی حفاظت کے لئے۔
  • 11:03 - 11:07
    اگر آپ ایک ای بک خریدتے ہیں
    تو اسے جسے چاہیں اسے نہیں بھیج سکتے۔
  • 11:07 - 11:10
    تو کیوں نہ اسکا اطلاق موبائل فون
    پر بھی کریں؟
  • 11:11 - 11:16
    کیا یہ جاسکتا ہے کہ مطالبہ کیا جائے کہ
    ٹیک کمپنیاں پہلے سے طے شدہ انداز میں
  • 11:16 - 11:19
    ہماری مشینوں اور پروگرامز میں
    ایسے حفاظتی اقدام نصب کریں۔
  • 11:20 - 11:23
    بھئی آپ اپنی کار کا رنگ تو منتخب کرتے ہیں،
  • 11:23 - 11:26
    مگر ہوائی بیگ ضرورت کے طور پر
    ہمیشہ شامل ہوتے ہیں۔
  • 11:28 - 11:32
    اگر ہم رضامندی اور رازداری پر
    مزید نہیں سوچیں گے،
  • 11:32 - 11:35
    تو نتائج بہت سنجیدہ ہوسکتے ہیں۔
  • 11:35 - 11:38
    اوہائیو میں ایک نوجوان تھی ۔۔
  • 11:38 - 11:40
    مثلاً رازداری کے لئے ہم اسے
    جینیفر کہہ لیتے ہیں۔
  • 11:41 - 11:45
    اس نے اپنی برہنہ تصاویر اپنے ہم مدرسہ
    معشوق کے ساتھ بانٹیں،
  • 11:45 - 11:46
    یہ سوچ کر کے وہ قابل بھروسہ ہے۔
  • 11:48 - 11:50
    بدقسمتی سے اس نے دھوکہ دیا
  • 11:50 - 11:53
    اور اس کی تصاویر پورے اسکول
    میں پھیلا دیں۔
  • 11:53 - 11:56
    جینیفر بری طرح ذلیل و رسوا ہوگئی،
  • 11:57 - 12:01
    مگر بجائے ہمدردی کے اس کے ہم جماعتوں نے
    اسے ہراساں کیا۔
  • 12:01 - 12:03
    انھون ے اسے طوائف اور بدچلن کہا
  • 12:03 - 12:05
    اور اس کی زندگی کو اذیت ناک بنا دیا۔
  • 12:05 - 12:09
    جینیفر نے اسکول آنا کم کردیا
    اس کے گریڈز گرنا شروع ہوگئے۔
  • 12:10 - 12:13
    بالآخر، جینیفر نے اپنی زندگی ختم
    کرنے کا فیصلہ کرلیا۔
  • 12:15 - 12:17
    جینیفر نے کچھ غلط نہیں کیا تھا۔
  • 12:17 - 12:20
    محض اپنی برہنہ تصویر دی تھی
  • 12:20 - 12:23
    کسی ایسے کو جس پر اس کے خیال میں
    وہ بھروسہ کرسکتی تھی۔
  • 12:23 - 12:25
    ہمارا قانون اسے کہتا ہے کہ
  • 12:25 - 12:29
    اس سے ایک بچوں کی برہنگی جیسا
    گھناونا جرم سرزد ہوا ہے۔
  • 12:30 - 12:31
    ہماری جنسی تفریق اسے کہتی ہے
  • 12:31 - 12:35
    کہ اپنی برہنہ تصویر بنا کر،
  • 12:35 - 12:38
    اس نے ایک بدترین اور شرمناک
    کام انجام دیا ہے۔
  • 12:38 - 12:43
    اور جب ہم یہ تصور کرتے ہیں کہ
    ڈیجیٹل میڈیا میں رازداری ناممکن ہے،
  • 12:43 - 12:48
    ہم مکمل طور پر اس کے معشوق کے بہت برے
    رویئے کو نظر انداز کرتے ہیں۔
  • 12:49 - 12:55
    لوگ اب بھی رازداری کے متاثرین سے
    ہر وقت یہی کہتے ہیں،
  • 12:55 - 12:56
    "کیا سوچ کر کیا تم نے یہ؟
  • 12:56 - 12:59
    تمہیں کبھی وہ تصویر نہیں بھیجناچاہئے تھی۔"
  • 13:00 - 13:04
    اگر آپ سوچ رہے ہیں کہ اس کے بجائے
    کیا کہنا چاہئے، تو یہ آزمائیں۔
  • 13:04 - 13:08
    مثلاً آپ اپنے دوست کے پاس گئے
    جس کی ٹانگ ’اسکی اِنگ‘ میں ٹوٹ گئی،
  • 13:08 - 13:13
    اس نے تفریح کے لئے ایک خطرہ مول لیا،
    جس کا انجام اچھا نہ ہوا۔
  • 13:13 - 13:15
    شائد آپ وہ بے وقوف ثابت
    نہیں ہوں گے جو کہے،
  • 13:15 - 13:18
    "میرے خیال سے تمہیں اسکی اِنگ
    نہیں کرنی چاہئے تھی۔"
  • 13:20 - 13:22
    اگر ہم رضامندی پر مزید سوچیں،
  • 13:22 - 13:25
    تو ہم دیکھیں گے کہ رازداری
    کی خلاف ورزی کے متاثرین
  • 13:26 - 13:27
    ہماری ہمدردی کے مستحق ہیں،
  • 13:27 - 13:32
    نہ کہ شرمندگی، احساس جرم، ہراساں
    کرنے اور سزا دینے کے۔
  • 13:32 - 13:37
    ہم متاثرین کی مدد، اورکچھ رازداری کی
    خلاف ورزیوں کو روک سکتے ہیں
  • 13:37 - 13:41
    ان انفرادی اور تکنیکی تبدیلیوں کو
    یقینی بنا کر۔
  • 13:42 - 13:48
    کیونکہ مسئلہ سیکسٹنگ نہیں، بلکہ
    اصل مسئلہ ڈیجیٹل رازداری ہے۔
  • 13:48 - 13:50
    اور ایک حل رضامندی ہے۔
  • 13:51 - 13:55
    تو اگلی بارجب ایک رازداری کی خلاف ورزی
    کا متاثر آپ سے ملے تو،
  • 13:55 - 13:58
    الزام دینے کے بجائے
    کچھ اس طرح کیجئے:
  • 13:58 - 14:01
    ڈیجیٹل رازداری سے متعلق اپنے
    خیالات کو تبدیل کیجئے،
  • 14:01 - 14:04
    اور ہمدردی سے برتاو کیجئے۔
  • 14:05 - 14:06
    شکریہ
  • 14:06 - 14:12
    (تالیاں)
Title:
محفوظ سیکسٹنگ [جنسی گفتگو] کیسے کریں
Speaker:
ایمی ایڈیلے ہیسینوف
Description:

سیکسٹنگ یعنی جنسیات پر مبنی ایسی گفتگو جو موبائل فونز یا انٹرنیٹ چیٹ کے ذریعے ہو۔ یہ بھی دوسرے بہت سے کاموں کی طرح جو باعث لذت ہوں، مگر ساتھ ساتھ نقصانات بھی رکھتے ہوں۔ ایمی ایڈیلے ہیسینوف اپنی اس گفتگو میں ہدف بنا رہی ہیں سیکسٹنگ کی عوامی میڈیا میں شمولیت اور قانون اور تعلیم میں اس کے عمل دخل کے اثرات کو۔ وہ بتا رہی ہیں اس کے مضمرات سے بچنے کے عملی حل، کہ کس طرح لوگ اور ٹیکنیکل کمپنیاں حساس اور بدنام کرسکنے والی معلومات اورڈیجیٹل فائلوں کو بچانے کے اقدامات کرسکتی ہیں۔

more » « less
Video Language:
English
Team:
TED
Project:
TEDTalks
Duration:
14:25

Urdu subtitles

Revisions