YouTube

Got a YouTube account?

New: enable viewer-created translations and captions on your YouTube channel!

Urdu subtitles

نا ممکن کو کرنا، خوف پر قابو پانا |دانيال ماير| ٹیڈ ایکس ماسٹرٹ

Get Embed Code
75 Languages

Showing Revision 40 created 05/10/2016 by Umar Anjum.

  1. شکریہ

  2. ایک دفعہ انڈیا میں ایک بادشاہ تھا، ایک
    مہاراجہ، اسکی سالگرہ پر ایک حکم جاری ہوا
  3. کہ تمام سردار بادشاہ کے لیے اسکی شان کے
    مطابق تحفہ لائیں۔
  4. کچھ عمدہ ریشم لائے،
    کچھ شاندار تلواریں،
  5. کچھ سونا لائے۔
  6. سب سے آخر میں ایک چھوٹا سا جھریوں والا
    بوڑھا آدمی چلتا ہوا آیا
  7. جو اپنے گاوں سے سفر کرتا ہو آیا تھا جو
    کئی دن کے سمندری سفر پر تھا۔
  8. اور جب وہ آیا تو بادشاہ کے بیٹے نے پوچھا،
    "تم بادشاہ کے لیے کیا تحفہ لائے ہو؟"
  9. اور بوڑھے آدمی نے آہستگی سے اپنا ہاتھ
    کھول کر دکھایا
  10. ایک بہت خوبصورت سیپ، جامنی، پیلے، لال،
    اور نیلے تقش و نگار والا۔
  11. اور بادشاہ کے بیٹے نے کہا
  12. "یہ تحفہ بھلا بادشاہ کے لیے مناسب ہے!
    یہ کس قسم کا تحفہ ہے؟"
  13. بوڑھے آدمی نے آہستگی سے اوپر اسے دیکھا
    اور کہا،
  14. "لمبی طویل مسافت ۔ ۔ ۔ تحفے کا حصہ ہے۔"
  15. (قہقہے)
  16. چند لمحات کے بعد،
    میں آپکو ایک تحفہ دوں گا،
  17. ایک تحفہ جو میرے خیال میں پھیلانے
    کے قابل ہے۔
  18. لیکن اس سے پہلے میں آپکو اپنی
  19. طویل مسافت پر لے جانا چاہوں گا۔
  20. آپ میں سے اکثر کی طرح،
  21. شروع میں، میں ایک چھوٹا بچہ تھا۔
  22. آپ میں سے کتنوں نے ایسے ہی آغاز کیا تھا؟
  23. جوان پیدا ہوئے؟
  24. آپ میں سے تقریبا آدھے ۔ ۔ ٹھیک ہے
  25. (قہقہے)
  26. اور باقی لوگ، کیا؟
    آپ مکمل بڑے پیدا ہوئے؟
  27. جناب، میں آپکی والدہ سے ملنا چاہوں گا!
  28. نا ممکن کی بات کرو!
  29. ایک بچے کی حثیت سے مجھے ہمیشہ نا ممکن کو
    کرنے کی لگن تھی۔
  30. میں آج کے دن کا کئی برسوں سے منتظر تھا،
  31. کیونکہ آج وہ دن ہے جب میں کوشش کروں گا
  32. نا ممکن کو کرنے کی،
    آپ کی آنکھوں کے سامنے،
  33. یہاں ٹیڈ ایکس ماسٹرٹ میں۔
  34. میں شروع کروں گا
  35. آپ کو اس کا اختتام بتا کر:
  36. اور میں آپ کو ثابت کر دوں گا
  37. کہ نا ممکن نا ممکن نہیں۔
  38. اور میں آخر میں آپ کو ایک تحفہ دےوں گا
    جو پھیلانے کے قابل ہے
  39. میں آپ کو دکھاوں گا کہ آپ اپنی زندگی میں
    نا ممکن کو کر سکتے ہیں۔
  40. اپنی زندگی میں نا ممکن کو کرنے کی تلاش میں
    میں نے پایا کہ
  41. دنیا کے تمام لوگوں میں دو چیزیں
    مشترکہ ہیں۔
  42. سب کے خوف ہوتے ہیں،
  43. اور سب کے خواب ہوتے ہیں۔
  44. نا ممکن کو کرنے کی تلاش میں میں نے پایا کہ
    تین چیزیں ہیں
  45. جو میں ان سالوں میں کرتا رہا
  46. جنہوں نے مجھے نا ممکن کو کرنے پر اکسایا:
  47. ڈوج بال یا آپ اسے ٹرف بال بھی کہتے ہیں،
  48. سپر مین،
  49. اور مچھر۔
  50. یہ میرے تین کلیدی الفاظ ہیں۔
  51. اب آپکو پتہ ہے کہ میں زندگی میں کیوں
    نا ممکن کو کرتا ہوں
  52. تو اب میں آپ کو اپنی طویل مسافت پر لے
    کر جا رہا ہوں،
  53. خوف سے خوابوں تک،
  54. الفاظ سے تلواروں تک،
  55. ڈوج بال سے
  56. سپر مین تک
  57. اور مچھر تک۔
  58. اور پرامید ہوں کہ دکھا سکوں
  59. کہ آپ کیسے اپنی زندگی میں نا ممکن کو کر
    سکتے ہیں۔
  60. 4 اکتوبر 2007۔
  61. میرا دل اچھل رہا تھا،
    گٹھنے کانپ رہے تھے
  62. جب میں سٹیج پر چڑھا
  63. سینڈرز تھیڑ
  64. ہارورڈ یونیورسٹی میں قبول کرنے
  65. 2007 کا اگ نوبیل انعام برائے طب
  66. ایک طبی تحقیقی مقالہ پر جس کا میں
    شریک مصنف تھا
  67. عنوان تھا "تلوار نگلنا...
  68. ...اور اس کے اثرات".
  69. (قہقے)
  70. یہ ایک چھوٹے سے جریدے میں شائع ہوا تھا
    جسے میں نے پہلے کبھی نہیں پڑھا تھا،
  71. دی برٹش میڈیکل جرنل۔
  72. اور میرے لیے یہ ایک نا ممکن خواب تھا
    جو سچ ہوا،
  73. یہ میرے جیسے شخص کے لیے حیران کن
    غیر متوقع واقعہ تھا،
  74. یہ اعزاز تھا جسے میں کبھی نہیں بھولوں گا۔
  75. لیکن یہ میری زندگی کا سب سے یادگار
    واقعہ نہیں تھا۔
  76. 4 اکتوبر 1967 کو،
  77. یہ ڈرا ہوا، شرمیلا، پتلا، ناکارہ بچہ
  78. انتہائی خوف کا شکار تھا۔
  79. جب وہ سٹیج پر جانے والا تھا،
  80. اس کا دل بے قابو ہو رہا تھا،
  81. اس کے گھٹنے کانپ رہے تھے۔
  82. اس نے بولنے کے لیے اپنا منہ کھولنا چاہا،
  83. لیکن الفاظ اس کے منہ سے نہ نکلے۔
  84. وہ آنسوں میں بھیگا کھڑا کانپتا رہا۔
  85. وہ تکلیف سے مفلوج ہو گیا تھا،
  86. خوف سے منجمند تھا۔
  87. یہ ڈرا ہوا، شرمیلا، پتلا، ناکارہ بچہ
  88. انتہائی خوف کا شکار تھا۔
  89. اسے اندھیرے کا خوف تھا،
  90. بلندیوں سے ڈرتا تھا،
  91. مکڑیوں اور سانپوں سے ڈرتا تھا
  92. آپ میں سے کون مکڑیوں اور سانپوں سے
    ڈرتے ہیں؟
  93. ہاں، آپ میں سے کچھ ...
  94. اس کو پانی اور شارک سے ڈر لگتا تھا ...
  95. وہ ڈاکڑوں، نرسوں اور دندان سازوں سے
    ڈرتا تھا،
  96. اور سوئیوں اور ورما سے اور تیز چیزوں سے
    ڈرتا تھا۔
  97. لیکن سب سے زیادہ اس کو ڈر لگتا تھا
  98. لوگوں سے۔
  99. یہ خوف زدہ، شرمیلا، پتلا، نکما بچہ
  100. میں تھا۔
  101. مجھے ناکامی اور ٹھکرائے جانے کا خوف تھا،
  102. کمتر خود اعتمادی، احساس کمتری،
  103. اور کچھ ایسا جس کے لیے اس وقت آپ
    مدد بھی نہیں طلب کر سکتے تھے:
  104. معاشرتی بے چینی کا دباو۔
  105. کیونکہ مجھے ڈر تھے اس لیے غنڈے مجھے تنگ
    کرتے اور مارتے تھے۔
  106. وہ میرے پر ہنستے تھے اور میرے نام بلاتے،
    وہ مجھے کبھی اپنے اندرونی کھیلوں میں
  107. شریک نہ کرتے۔
  108. ہاں ایک کھیل تھا جس میں وہ مجھے کھلاتے
  109. ڈوج بال۔
  110. اور میں گیند سے بچنے میں اچھا نہیں تھا۔
  111. غنڈے میرا نام پکارتے،
  112. میں اوپر دیکھتا اور پاتا کہ لال گیند
  113. نا قابل یقین تیزی سے میرے منہ پر لگتے
  114. ٹھاہ، ٹھاہ، ٹھاہ ۔
  115. اور مجھے یاد ہے کہ کئی دن
    سکول سے گھر آتے ہوئے،
  116. میرا چہرہ لال اورسوجا ہوتا، میرے کان
    لال ہوتے اور ان میں گھنٹیاں بج رہی ہوتیں۔
  117. میری آنسوں سے بھری آنکھیں جل رہی ہوتیں،
  118. اور انکے الفاظ میرے کانوں میں بج رہے ہوتے۔
  119. اور جس نے بھی کہی تھا،
  120. "لاٹھیاں اور پتھرمیری ہڈیاں توڑ سکتے ہیں
    لیکن الفاظ کبھی مجھے نہیں توڑ سکتے"
  121. غلط کہا تھا۔
  122. الفاظ چھری کی طرح کاٹ سکتے ہیں۔
  123. الفاظ تلوار کی طرح پیوست ہو سکتے ہیں۔
  124. الفاظ اتنے گہرے زخم لگا سکتے ہیں کہ
  125. وہ دکھائی بھی نہ دیں۔
  126. تو میرے خوف تھے۔
    اور الفاظ میرے بد ترین دشمن تھے۔
  127. اب بھی ہیں۔
  128. لیکن میرے خواب بھی تھے۔
  129. میں گھر جاتا اور
    سپر مین کی کامک کتابوں میں گم ہو جاتا
  130. اور سپر مین کی کامک کتابوں کو پڑھتا
  131. اور خواب دیکھتا کہ میں سپر مین کی طرح کا
    سپر ہیرو بننا چاہتا تھا۔
  132. میں سچ اور انصاف کے لیے لڑنا چاہتا تھا،
  133. میں کرپٹونائیٹ اور ولنز کے خلاف لڑنا
    چاہتا تھا،
  134. میں دنیا کے گرد اڑنا چاہتا تھا، کرتب
    دکھانا اور جانیں بچانا چاہتا تھا۔
  135. میرا رجحان ان چیزوں کی طرف بھی تھا جو
    حقیقی تھیں۔
  136. میں گینیزبک آف ورلڈ ریکارڈ پڑھتا اور
    'رپلے بلیو اٹ اور ناٹ' کو پڑھتا۔
  137. آپ میں سے کسی نے کبھی گینیزبک آف
    ورلڈ ریکارڈ یا 'رپلے کو پڑھا ہے؟
  138. مجھے یہ کتابیں بہت پسند ہیں
  139. میں نے حقیقت میں لوگوں کے کرتب دیکھے ۔
  140. اور کہا، میں یہ کرنا چاہتا ہوں۔
  141. اگر غنڈے مجھے اپنی کھیلوں میں
  142. شامل نہیں کرتے،
  143. میں اصل جادو اور کرتب کرنا چاہتا ہوں۔
  144. میں کچھ ایسا شاندار کرنا چاہتا ہوں جو یہ
    غنڈے نہیں کر سکتے۔
  145. میں اپنا مقصد اور ارادہ جاننا چاہتا تھا،
  146. میں اپنی زندگی کا مطلب جاننا چاہتا تھا،
  147. میں کچھ ایسا حیران کن کرنا چاہتا تھا جو
    دنیا کو بدل دے؛
  148. میں یہ ثابت کرنا چاہتا تھا کہ نا ممکن
    نا ممکن نہیں۔
  149. دس سال کے بعد -
  150. یہ میری 21 ویں سالگرہ سے ایک ہفتہ پہلے کی
    بات ہے۔
  151. ایک دن میں دو ایسی چیزیں ہوئیں جنہوں نے
    میری زندگی کو ہمیشہ کے لیے بدل دیا۔
  152. میں تامل ناڈو، جنوبی انڈیا میں رہ رہا تھا
  153. میں وہاں ایک پادری تھا،
  154. اور میرے مربی، میرے دوست نے مجھ سے پوچھا،
  155. "دانیال، تمہاے آدرش کیا ہیں؟ "
  156. میں نے کہا، "آدرش ؟
    آدرش کیا ہوتے ہیں؟"
  157. وہ بولا "آدرش زندگی کے بڑے مقاصد
    ہوتے ہیں۔
  158. وہ خوابوں اور مقاصد کا مجموعہ ہوتے ہیں،
    جیسے اگر تم
  159. اپنی مرضی کے مطابق کچھ بھی کر سکتے
    یا کہیں بھی جا سکتے
  160. کچھ بھی بن سکتے ہوتے،
  161. تم کہاں جاتے؟
    تم کیا کرتے؟
  162. تم کیا بنتے؟
  163. میں بولا، "میں یہ نہیں کر سکتا!
    میں ڈرتا ہوں! میرے بہت سے خوف ہیں"!
  164. اس رات میں نے اپنی بوری لی اور بنگلے کی
    چھت پر چلا گیا،
  165. ستاروں کے نیچے لیٹا رہا،
  166. اور چمگاڈروں کو مچھروں پر غوطہ لگاتے
    دیکھتا رہا،
  167. اور میں صرف آدرش، خواب اور مقاصد کے بارے
    میں سوچتا رہا،
  168. اور ڈوج بال والے ان غنڈوں کے بارے میں۔
  169. کچھ گھنٹوں کے بعد میں سو کر اٹھا۔
  170. میرا دل بے قابو ہو رہا تھا،
    اور میرے گھٹنے کانپ رہے تھے۔
  171. اس مرتبہ یہ خوف کی وجہ سے نہیں تھا۔
  172. میرا جسم تشنج کا شکار تھا۔
  173. اور اگلے پانچ دن
  174. میں نیم بیہوشی کے عالم میں پستر مرگ پر
    اپنی زندگی کی لڑائی لڑ رہا تھا۔
  175. میرا دماغ 105 ملیریا بخار میں جل رہا تھا۔
  176. جب بھی میں ہوش میں آتا، میں صرف آدرش
    کے بارے میں سوچ سکتا تھا۔
  177. میں نے سوچا،
    "میں زندگی میں کیا کرنا چاہتا ہوں"
  178. آخرکار، اپنی اکیسویں سالگرہ سے
    ایک رات پہلے،
  179. اس واضح لمحہ میں،
  180. مجھے احساس ہوا:
  181. مجھے احساس ہوا وہ چھوٹا مچھر،
  182. اینوفیلیزسٹیپھینسی
  183. وہ چھوٹا مچھر
  184. جس کا وزن 5 مائیکروگرام سے بھی کم ہے
  185. نمک کے ایک ذرے سے بھی کم،
  186. اگر وہ مچھر ایک 170 پاونڈ، 80 کلو،
    کے آدمی پر قابو پا سکتا ہے،
  187. مجھے احساس ہوا کہ یہ میرا کرپٹونائیٹ ہے۔
  188. پھر مجے احساس ہوا، نہیں، نہیں،
    یہ مچھر نہیں،
  189. یہ اس مچھر کے اندر چھوٹا طفیلیہ ہے،
  190. پلا سموڈیم فلکیپرم، جو سالانہ
    دس لاکھ سے زائد لوگوں کو مارتا ہے۔
  191. بھر مجھے احساس ہوا نہیں، نہیں،
    یہ اس سے بھی چھوٹا ہے،
  192. لیکن مجھے یہ اس سے بہت بڑا لگا۔
  193. مجھے احساس ہوا،
  194. میرا ڈر کرپٹونائیٹ تھا،
  195. میرا طفیلیہ،
  196. جس نے ساری زندگی مجھے محتاج اور
    مفلوج رکھا۔
  197. آپ جانتے ہیں خطرے اور خوف میں فرق ہے۔
  198. خطرہ اصل ہوتا ہے۔
  199. خوف ایک اختیار ہے۔
  200. مجھے احساس ہوا کہ میرے پاس ایک اختیار ہے:
  201. یا میں زندگی خوف میں گزار سکتا ہوں،
    اور اس رات ناکامی میں مرسکتا ہوں،
  202. یا میں اپنے خوف کو مار سکتا ہوں،
    اور میں
  203. اپنے خواب پا سکتا ہوں،
    میں زندگی جی سکتا ہوں۔
  204. اور آپ جانتے ہیں کہ بستر مرگ پر کچھ ایسی
    بات ہوتی ہے
  205. اور موت کا سامنا کرتے ہوئے جو آپ کو زندہ
    رہنے پر مجبور کرتی ہے۔
  206. مجھے احساس ہوا کہ ہر کوئی مرتا ہے،
    سب لوگ دراصل جیتے نہیں۔
  207. مرنے میں ہی جینا ہے۔
  208. آپ جانتے ہیں جب آپ مرنا جان جائیں
  209. تو آپ جینا جان جاتے ہیں۔
  210. تو میں نے فیصلہ کیا کہ میں تبدیل کروں گا
  211. اپنی کہانی اس رات۔
  212. میں مرنا نہیں چاہتا تھا۔
  213. تو میں نے دعا کی، میں نے کہا،
  214. "خدا، اگر آپ مجھے میری21 ویں سالگرہ
    تک زندہ رکھیں،
  215. میں خوف کو اپنی زندگی پر حاوی نہیں ہونے
    دوں گا۔
  216. میں اپنے تمام خوف سے چھٹکارا پا لوں گا،
  217. میں اپنے خوابوں کے لیے جدوجہد کروں گا،
  218. میں اپنا رویہ بدلنا چاہوں گا،
  219. میں اپنی زندگی میں کچھ حیران کن کرنا
    چاہوں گا،
  220. میں اپنا مقصد اور اپنی وجہ حیات
    جاننا چاہوں گا،
  221. میں جاننا چاہوں گا کہ نا ممکن
    نا ممکن نہیں۔"
  222. یہ آپ خود سمجھیں کہ میں اس رات زندہ بچ
    گیا یا نہیں۔
  223. (قہقہے)
  224. لیکن اس رات میں نے اپنی زندگی کے پہلے 10
    مقاصد کی فہرست بنائی:
  225. میں نےفیصلہ کیا کہ میں تمام بڑے براعظموں
    کی سیر کرنا چاہوں گا
  226. دنیا کے 7 عجائبات کو دیکھنا
  227. کئی نئی زبانیں سیکھنا،
  228. کسی بے آباد جزیرے پر رہنا،
  229. سمندر میں کشتی پر رہنا،
  230. ایمزون کے کسی انڈین قبیلے کے ساتھ رہنا،
  231. سویڈن کی بلند ترین چوٹی پر چڑھنا،
  232. میں ماونٹ ایورسٹ پر سورج کا طلوع دیکھنا
    چاہتا تھا،
  233. نیش ول میں موسیقی کے کاروبار میں کام کرنا
  234. میں سرکس میں کام کرنا چاہتا تھا،
  235. اور میں ہوائی جہاز سے چھلانگ لگانا
    چاہتا تھا۔
  236. اگلے بیس سالوں میں میں نے ان میں سے زیادہ
    تر مقاصد کو پا لیا۔
  237. ہر دفعہ جب میں اس فہرست میں سے کچھ کرتا،
  238. میں اس فہرست میں مزید 5 یا 10 چیزوں کا
    اضافہ کر لیتا یوں وہ بڑھتی رہتی۔
  239. اگلے سات سال میں بہاماس میں ایک چھوٹے
    جزیرے پر رہا
  240. تقریبا سات سال
  241. کانے کی چھت کی جھونپڑی میں،
  242. کھانے کے لیے شارک اور سٹنگرے کا شکار کرتا،
    جزیرے پر بالکل اکیلا،
  243. لنگوٹی پہنے،
  244. اور میں نے شارکس کے ساتھ تیرنا سیکھا،
  245. اور وہاں سے میں میکسیکو چلا گیا،
  246. اور پھر میں ایکواڈور میں دریائے ایمزوں کے
    طاس میں چلا گیا،
  247. پوجو پونگو ایکواڈور،
    ایک قبیلے کے ساتھ وہاں رہا،
  248. اور آہست آہستہ مجھے صرف آدرشوں سے حوصلہ
    ملتا گیا۔
  249. میں نیش ول میں موسیقی کے کاروبار میں گیا،
    پھر سویڈن گیا،
  250. سٹاک ہوم گیا، وہاں موسیقی کے کاروبار میں
    کام کیا،
  251. جہاں میں آرکٹک سرکل سے بلند
    کیبینکسی پہاڑ پر چڑھا۔
  252. میں نے مسخرہ پن سیکھا،
  253. بازی گری سیکھی،
  254. لمبی بیساکھیوں سے چلنا سیکھا،
  255. ایک پہیے کی سائیکل، آگ کھانا،
    شیشہ کھانا سیکھا۔
  256. 1977 میں، میں نے سنا کہ کہ درجن سے بھی کم
    تلوار نگلنے والے باقی ہیں
  257. میں نے کہا، "مجھے یہ کرنا چاہیے!"
  258. میں ایک تلوار نگلنے والے سے ملا اور
    اس سے کچھ مشورے مانگے۔
  259. اس نے کہا، "ہاں، میں تمہیں دو
    مشورے دیتا ہوں:
  260. پہلا: یہ بہت خطرناک ہے،
  261. لوگ اسے کرتے ہوئے مر چکے ہیں۔
  262. دوسرا:
  263. اسے نہ کرنا!"
  264. (قہقہے)
  265. تو اسے میں نے اپنا آدرش بنا لیا۔
  266. اور میں اس کی مشق کرتا رہا 10 سے 12
    دفعہ، روزانہ،
  267. چار سال تک۔
  268. اب میں نے اس کا حساب لگایا ہے ۔ ۔ ۔
  269. 4 ضرب 365 (ضرب12)
  270. یہ کوئی 13000 ناکام کوششیں بنتی ہیں
  271. یہاں تک کہ 2001 میں پہلی تلوارمیرے گلے سے
    نیچے چلی گئی۔
  272. اس دوران میں نے اپنا ایک ہدف بنایا
  273. دنیا کا سب سے بہترین تلوار نگلنے والا
    ماہر بننا۔
  274. چناچہ میں نے ہر کتاب، رسالہ، اخباری مضمون
    تلاش کیا
  275. ہر طبی رپورٹ، میں نے علم الحیات اور
    تشریح الاعضاﺀ کا مطالعہ کیا،
  276. میں نے ڈاکٹروں اور نرسوں سے بات کی،
  277. دوسرے تلوار نگلنے والوں سے رابطے کیے
  278. تلوار نگلنے والوں کی
    بین الاقوامی تنظیم میں،
  279. اور ایک 2 سالی طبی تحقیقی مطالعہ کیا
  280. تلوار نگلنے اور اس کے اثرات پر
  281. جو برٹش میڈیکل جرنل میں شائع ہوا۔
  282. (قہقے)
  283. شکریہ۔
  284. (تالیاں)
  285. اور میں نے تلوار نگلنے کے بارے میں
    حیران کن چیزیں سکھیں۔
  286. ایسی چیزیں میں شرطیہ کہہ سکتا ہوں جو آپ
    نے پہلے نہ سوچیں ہوں گی مگر اب سوچیں گے۔
  287. اگلی دفعہ جب آپ گھرجائیں اور چھری سے گوشت
    کا ٹکڑا کاٹ رہے ہوں
  288. یا تلوار، یا کٹلری استعمال کر رہے ہوں تو
    آپ اس بارے میں سوچیں گے...
  289. مجھے پتا چلا کہ تلوار نگلنے کا آغاز انڈیا
    سے ہوا -
  290. بالکل وہاں جہاں میں نے اسے ایک 20 سالہ
    لڑکے کی حثیت سے دیکھا تھا -
  291. تقریبا 4000 سال پہلے، 2000 قبل مسیح میں۔
  292. پچھلے 150 سال میں، تلوار نگلنے والوں نے
  293. سائنس اور طب کے میدان میں مدد کی
  294. 1868 میں غیر لچکدار عمل دروں بینی کو
    پروان چڑھانے میں
  295. ڈاکڑ ایڈولف کسمال کی فریبرگ جرمنی میں۔
  296. 1906 میں، برقی مُعائنہ قلب میں ویلز میں،
  297. تلوار نگلنے کے عوارض اور نظام انہضام،
  298. برونکائی کی اندرونی حالَت کو جانچَنے میں۔
  299. لیکن پچھلے 150 سال میں،
  300. ہمیں سینکڑوں زخموں اور درجنوں ہلاکتوں کا
    پتہ ہے...
  301. یہ غیر لچکدار عمل دروں بینی ہے جو ڈاکڑ
    ایڈولف کسمال نے بنایا۔
  302. لیکن ہمیں پتہ چلا کے پچھلے 150 سالوں میں
    29 ہلاکتیں ہوئیں
  303. لندن میں اس تلوار نگلنے والے کی ہلاکت سمیت
    جس نے اپنے دل میں تلوار گاڑ دی۔
  304. ہمیں یہ بھی پتہ چلا ہے کہ ہر سال 3 سے 8
  305. تلوار نگلنے والوں کو سنجیدہ نوعیت کے زخم
    آتے ہیں۔
  306. مجھے پتہ ہے کیونکہ مجھے فون آتے ہیں۔
  307. ابھی دو آئے ہیں،
  308. پچھلے کچھ ہفتوں میں، ایک سویڈن سے اور ایک
    اورلینڈو سے،
  309. تلوار نگلنے والوں کی جانب سے جو ہسپتال میں
    زخمی ہیں۔
  310. تو یہ انتہائی خطرناک ہے۔
  311. دوسری بات جو مجھے پتہ چلی ہے یہ کہ تلوار
    نگلنے کو سیکھنے میں
  312. 2 سے 10 سال لگ جاتے ہیں
  313. اکثر لوگوں کے لیے۔
  314. لیکن سب سے حیران کن بات جو مجھے پتہ چلی کہ
  315. تلوار نگلنے والے نا ممکن کو کرنا
    سیکھتے ہیں۔
  316. اور میں آپ کو ایک معمولی سا راز بتا دوں:
  317. 99.99% نا ممکن پر توجہ نہ دیں۔
  318. 0.1% ممکن پر توجہ دیں اور ڈھونڈیں کہ باقی
    کو کیسے ممکن بنانا ہے۔
  319. اب میں آپ کو ایک تلوار نگلنے والے کے ذہن
    کی سیر کراتا ہوں۔
  320. ایک تلوار کو نگلنے کے لیے،
    ذہن بمقابلہ مادہ کا مراقبہ کرنا ہوتا ہے،
  321. استرے کی دھار کی طرح تیز توجہ،
    مکمل ارتکاز تاکہ
  322. جسم کے اندرونی اعضا کو علیحدہ کیا جائے نیز
    جسم کے اضطراری افعال پر قابو پایا جائے
  323. ذہنی مدد سے خاکہ بنایا جائے،
    عضلاتی یاداشت کو دوہرا کر
  324. ديدہ دانستہ مشق 10,000 سے زائد بار۔
  325. اب میں آپ کو ایک تلوار نگلنے والے کے جسم
    کے اندر کی سیر کرواتا ہوں۔
  326. ایک تلوار کو نگلنے کے لیے،
  327. مجھے تلوار کو زبان کے اوپر سے گزارنا
    ہوتا ہے،
  328. تالو کے اضطراری عمل کو
    اننپرتالی سے پہلے روکنا،
  329. 90 درجے کے زاویے پر
    مکب سے نیچے لے جانا،
  330. کرکوفارنجیو سے گزرتے بالائی
    عاصرَہ سے غزائی نالی میں،
  331. عضلاتی اضطراری حرکت کو روکنا،
  332. پھل کو چھاتی کے خلا سے
  333. پھیپڑوں تک گزارنا۔
  334. اس وقت،
  335. مجھے اپنے دل کو تھوڑا پرے دھکیلنا ہوتا ہے۔
  336. اگر آپ دھیان سے دیکھیں،
  337. آپ دھڑکن کو میری تلوار کے ساتھ
    دیکھ سکتے ہیں
  338. کیونکہ یہ میرے دل کے ساتھ سہارا لیے ہے
  339. یہ غذائی نالی ٹشو سے انچ کے آٹھویں حصے سے
    بھی کم دور ہے۔
  340. یہ ایسی چیز نہیں جسے آپ جھوٹ موٹ کر سکیں۔
  341. پھر مجھے اسے سینے کی ہڈی سے آگے
    گزارنا ہوتا ہے،
  342. نچلے عاصرَہ سے غزائی نالی میں آگے
    معدے میں،
  343. معدے کے اضطراری عمل کو روکنا ہوتا ہے
    نیچے
  344. بہت آسان ہے۔
  345. (قہقے)
  346. اگر میں اس سے بھی آگے جاوں،
  347. بالکل نیچے اپنی بیض نالی تک۔
    (ڈچ) قنات فلوپی!
  348. مرد حضرات اپنی بیویوں سے بعد میں اس بارے
    میں پوچھ سکتے ہیں ...
  349. لوگ میرے سے پوچھتے ہیں، وہ کہتے ہیں،
  350. "بہت ہمت درکار ہوتی ہو گی، اپنی جان کو
    خطرے میں ڈالنے کے لیے،
  351. دل کو چھو کر، تلوار نگلنے میں..."
  352. نہیں۔ اصل ہمت چاہیے ہوتی ہے
  353. اس ڈرے ہوے، شرمیلے، پتلے، نکمے بچے کو
  354. ناکامی اور ٹھکرائے جانے کے خوف سے،
  355. اپنے دل کو سنبھالتے ہوئے،
  356. اور اپنی انا پر قابو پاتے ہوئے
  357. اور ان ڈھیروں اجنبیوں کے سامنے کھڑے ہو کر
  358. آپ کو اپنے خوف اور خوابوں کی کہانی سنانا،
  359. اس خطرے کے ساتھ کہیں اپنی ہمت نہ کھو دے،
    علامتی طور پر اور عملی طور پر۔
  360. جی ہاں، آپ کا شکریہ۔
  361. (تالیاں)
  362. دیکھیں، سب سے حیران کن بات یہ ہے
  363. میں ہمیشہ اپنی زندگی میں کچھ نمایاں کرنا
    چاہتا تھا
  364. اور اب میں کر رہا ہوں۔
  365. لیکن سب سے حیران کن یہ نہیں ہے کہ میں
    نگل سکتا ہوں
  366. 21 تلواریں اکٹھی،
  367. یا 20 فٹ پانی کی گہرائی میں
    88 شارک اور سٹنگریز کے ساتھ
  368. رپلے بلیو اٹ اور ناٹ کے لیے،
  369. یا 1500 درجے تک گرم سرخ تلوار
    سٹینلے سپر ہیومن کے لیے
  370. "فولادی آدمی" کے طور پر
  371. اور وہ واہیات سخت گرم تھی!
  372. یا ایک گاڑی کو تلوار سے کھینچ سکتا ہوں
    رپلے
  373. یا گینیز کے لیے،
  374. یا امریکہ گوٹ ٹیلنٹ کے
    فائنل تک پہنچ سکتا ہوں،
  375. یا 2001 کا اگ نوبل انعام برائے طب
    جیت سکتا ہوں۔
  376. نہیں یہ دراصل حیران کن نہیں ہے۔
  377. یہ لوگ سوچتے ہیں۔
    نہیں، نہیں، نہیں۔ یہ نہیں ہے۔
  378. اصل حیران کن چیز یہ ہے کہ
  379. خدا اس ڈرے ہوئے، شرمیلے، پتلے، نکمے بچے کو
  380. جو بلندیوں سے خوفزدہ تھا،
  381. جو پانی اور شارک سے ڈرتا تھا،
  382. اور ڈاکٹروں اور نرسوں اورسوئیوں اور
    تیز دھار اشئیا سے
  383. اور لوگوں سے بات کرنے سے
  384. اور اب اس نے مجھے دنیا کے اردگرد اڑنے
    کا موقع دیا
  385. 30,000 فٹ کی بلندی پر,
  386. تیز دھار چیزوں کو نگلتا ہوں شارکوں سے
    بھرے پانی کے ٹینک میں,
  387. اور پوری دنیا میں ڈاکٹروں، نرسوں اور آپ
    جیسے سامعین سے بات کرنا ہوں۔
  388. یہ اصل حیران کن چیز ہے میرےلیے۔
  389. میں ہمیشہ نا ممکن کرنا چاہتا تھا -
  390. شکریہ۔
  391. (تالیاں)
  392. شکریہ۔
  393. (تالیاں)
  394. میں ہمیشہ نا ممکن کرنا چاہتا تھا اور اب
    میں یہ کرتا ہوں۔
  395. میں اپنی زندگی میں کچھ حیران کن کرنا اور
    دنیا کو بدلنا چاہتا تھا،
  396. اور اب میں کرتا ہوں۔
  397. میں ہمیشہ دنیا کے گرد اڑنا اور غیر معمولی
    کرتب دکھانا چاہتا تھا
  398. اور جانیں بچانا چاہتا تھا اور اب کرتا ہوں۔
  399. اور آپ جانتے ہیں؟
  400. اس چھوٹے بچے کے بڑے خواب کا ایک معمولی حصہ
  401. ابھی اس کے اندر ہے۔
  402. (قہقہے)
    (تالیاں)
  403. اور آپ جانتے ہیں، میں ہمیشہ سے اپنا مقصد
    اور ارادہ جاننا چاہتا تھا،
  404. اور اب مجھے مل گیا ہے۔
  405. لیکن جانتے ہیں کیا؟
  406. یہ تلواروں کے ساتھ نہیں، وہ نہیں جو آپ
    سوچتے ہیں، میری طاقت کے ساتھ نہیں۔
  407. یہ دراصل میری کمزوری کے ساتھ ہے،
    میرے الفاظ۔۔
  408. میرا مقصد اور ارادہ دنیا کو بدلنے کا ہے
  409. خوف پر قابو پا کر،
  410. ایک وقت میں ایک تلوار،
    ایک وقت میں ایک لفظ،
  411. ایک وقت میں ایک چھری،
    ایک وقت میں ایک زندگی،
  412. لوگوں کو ہمت دینا کہ وہ غیرمعمولی بنیں
  413. اور اپنی زندگیوں میں نا ممکن کریں۔
  414. میرا مقصد دوسروں کی مدد کرنا اور
    ان کا مقصد ڈھونڈنا ہے۔
  415. آپ کا کیا ہے؟
  416. آپ کا مقصد کیا ہے؟
  417. آپ کو یہاں بھیجنے کا مقصد کیا ہے؟
  418. میرا ماننا ہے کہ غیر معمولی بننا
    ہم سب کا مقدر ہے۔
  419. آپ میں کیا خاص طاقت ہے؟
  420. دنیا میں موجود 7 ارب سے زیادہ لوگوں میں،
  421. کچھ درجنوں سے بھی کم تلوار نگلنے والے ہیں
  422. جو آج دنیا میں باقی ہیں،
  423. لیکن آپ صرف ایک ہیں۔
  424. آپ منفرد ہیں۔
  425. آپ کی کہانی کیا ہے؟
  426. آپ کو کیا چیز مختلف بناتی ہے؟
  427. اپنی کہانی سنائیے،
  428. چاہے آپ کی آواز باریک اور کانپ رہی ہو۔
  429. آپ کے آدرش کیا ہیں؟
  430. اگر آپ کچھ بھی کر سکتے، کچھ بھی
    بن سکتے، کہیں بھی جا سکتے
  431. آپ کیا کرتے؟ آپ کہاں جاتے؟
  432. آپ کیا کرتے؟
  433. آپ اپنی زندگی کے ساتھ کیا کرنا چاہتے ہیں؟
  434. آپ کے بڑے خواب کیا ہیں؟
  435. سوچئیے، ایک بچے کی حثیت سے آپ کے بڑے خواب
    کیا تھے؟
  436. میں شرط لگاتا ہوں اتنے سے نہیں تھے، واقعی؟
  437. آپ کے سرکش خواب کیا تھے
  438. جو آپ کوعجیب اور مبہم لگتے تھے؟
  439. شرطیہ کہتا ہوں اب وہ آپکو اتنے عجیب نہیں
    لگ رہے ہوں گے؟
  440. آپ کی تلوار کیا ہے؟
  441. آپ سب کے پاس ایک تلوار ہے،
  442. ایک خوابوں اور خوف کی دو دھاری تلوار۔
  443. اپنی تلوار کو نگلیے، یہ جہاں بھی ہو۔
  444. خواتین و حضرات، اپنے خوابوں کا پیچھا کریں،
  445. آپ جو بھی بننا چاہتے ہوں اس کے لیے کبھی
    بھی دیر نہیں ہوئی ہوتی۔
  446. ان ڈوج بال والے بدمعاشوں کے لیے،
    جن بچوں نے سوچا تھا
  447. کہ میں کبھی نا ممکن نہیں کر سکتا،
  448. میں نے انہیں بس یہی کہنا ہے:
  449. شکریہ۔
  450. کیونکہ اگر ولن نہ ہوتے تو غیرمعمولی ہیرو
    بھی نہ ہوتے۔
  451. میں یہاں یہ ثابت کرنے کے لیے ہوں کہ
    نا ممکن نا ممکن نہیں۔
  452. یہ بہت خطرناک ہے، یہ مجھے مار سکتا ہے۔
  453. امید ہے آپ کو مزا آئے گا۔
  454. (قہقہے)
  455. مجھے اس میں آپ کی مدد درکار ہو گی۔
  456. سامعین: دو، تین۔
  457. دانیال مایر: نہیں،نہیں، نہیں۔ مجھے آپ کی
    گنتی گننے میں مدد چاہیے ہو گی، ٹھیک؟
  458. (قہقہے)
  459. اگر آپ الفاظ جانتے ہوں؟ ٹھیک؟
    میرے ساتھ گنیے۔ تیار؟
  460. ایک۔
  461. دو۔
  462. تین۔
  463. نہیں، یہ 2 ہے، لیکن آپ کو اندازہ
    ہو گیا ہے۔
  464. سامعین: ایک۔
  465. دو۔
  466. تین۔
  467. (نگلتے ہوئے)
  468. (تالیاں)
  469. ڈم: جی ہاں!
  470. (تالیاں) (خوشی کا اظہار)
  471. آپ کا بہت شکریہ۔
  472. آپکا شکریہ، آپکا شکریہ، آپکا شکریہ۔
    دل کی گہرایوں سے آپکا شکریہ۔
  473. بلکہ معدے کی گہرایوں سے آپکا شکریہ۔
  474. میں نے کہا تھا میں یہاں نا ممکن کرنے آیا
    ہوں اور میں نے کر دکھایا ہے۔
  475. لیکن یہ نا ممکن نہیں تھا۔ یہ میں
    ہر روز کرتا ہوں۔
  476. نا ممکن چیز اس ڈرے ہوئے، شرمیلے، پتلے،
    نکمے بچے کا خوف کا سامنا کرنا تھا۔
  477. یہاں کھڑے ہو کر[ٹیڈ ایکس] سٹیج پر،
  478. اور دنیا کو تبدیل کرنا،
    ایک وقت میں ایک لفظ،
  479. ایک وقت میں ایک تلوار،
    ایک وقت میں ایک زندگی۔
  480. اگر میں نے آپکو سوچ کے نئے انداز دیے ہیں،
    اگر میں نے آپکو یقین دلایا ہے
  481. کہ نا ممکن نا ممکن نہیں،
  482. اگرمیں نے آپکو یہ احساس دلایا ہے کہ آپ
    اپنی زندگی میں نا ممکن کر سکتے ہیں،
  483. پھر میرا کام ختم ہوا اور اب
    آپکا شروع ہو گیا ہے۔
  484. خواب دیکھنا نہ چھوڑیں۔
    یقین کرنا نہ چھوڑیں۔
  485. مجھ میں یقین کرنے کا شکریہ
  486. اور میرے خواب میں شامل ہونے کا شکریہ۔
  487. اوریہ میرا آپ کے لیے تحفہ ہے:
  488. کہ نا ممکن نہیں
  489. سامعین: نا ممکن۔
  490. لمبی مسافت تحفے کا حصہ ہے۔
  491. (تالیاں)
  492. شکریہ۔
  493. (تالیاں)
  494. (خوشی کا اظہار)
  495. میزبان: شکریہ، دانیال مایر، واہ!